WAJID ALI SHAH AKHTAR

واجد علی شاہ اختر ٭

ریاست لکھنؤ کے نواب۔ 30 جولائی 1822 کو اودھ کے شاہی خاندان میں ان کی پیدائش ہوئی۔ ولیعہدی کے زمانے میں آتش کے شاگرد ہوۓ ۔ ان کا زمانہ علم و ادب کے لیۓ اودھ کا سنہرا دور تھا. انہوں نے خود کئی نئے راگ اور راگنیوں کی ایجاد کی۔ انیس و دبیر سے بہت متاثر تھے ۔ واجد علی شاہ کی شاعری پر اب تک کوئ تحقیقی کام نہیں ہو سکا ۔ ان کے ایک مرثیے سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ شادئ قاسم کے قائل نہیں تھے

دامادئ قاسم ۴ نہ نظر آئ کتب میں
چھانا بہت اس کو نہ مگر پائ کتب میں
یہ رمز طبیعت نہ میری لائ کتب میں
کس طرح سے پھر تیز ہو بینائ کتب میں
تعویذ کا البتہ ہے احوال ہر اک جا
جو تھا حسن ِ پاک نے اس بازو پہ باندھا

Special Thanks to Zeeshan Zaidi, UK for this short biography

مراثئ نواب واجد علی شاہ اختر

 

احوال حسین ابن علی باعث غم ہے

AHWAL E HUSSAIN IBN E ALI BAIS E GHAM HAI

آل احمد کی یہاں بے سر و سامانی ہے

AAL E AHMAD KI YEHAN BE SAR O SAMANI HAI

آنکھیں ہوئیں شیریں کی پسند

ANKHAIN HOIN SHEEREEN KI PASAND

آئ جو خبر قتل شہنشاہ زمن کی

AAYI JO KHABAR QATL E SHAHENSHAH E ZAMAN KI

ایقاسم رزق دو جہاں ایزد مناں

EEQASIM E RIZQ E DO JAHAN EEZID E MANNAN

اے عزیزو مہ محرم ہے

AYE AZEEZO MAH E MUHARRAM HAI

بیابان خزان بوستان ہے آج

BAYABAN E KHIZAN E BOOSTAN HAIN AAJ

پامال فوج حزن سر کائنات ہے

PAMAL FAUJ E HUZN SAR E KAINAT HAI

تاج سر خورشید کے اقسر ہیں ید اللہ

TAJ E SAR E KHURSHEED KE AFSAR HAIN YADULLAH

جہاں میں طائر رنگ چمن پریدہ ہے

JAHAN MAIN TAIR E RANG E CHAMAN

دنیا میں بروں کا بھی بھلا کرتے ہیں شبیر

DUNYA MAIN BADON KA BHI BHALA KARTE HAIN SHABBIR

دنیا میں کوئ بھائ سے بھائ جدا نہ ہو

DUNYA MAIN KOI BHAI SE BHAI JUDA NA HO

دوستو آج مجھے صرف بکا ہونے دو

DOSTO AAJ MUJHAY SARF E BUKA HONE DO

ذوالفقار اسد اللہ علم ہوتی ہے

ZULFAQAR E ASADULLAH ALAM HOTI HAI

روداد شہیداں سے جکر چاک ہوا ہے

RODAD E SHAHEEDAN SE JIGAR CHAAK HOA HAI

سفینہ دل عالم تباہ ہوتا ہے

SAFEENA E DIL E AALAM TABAH HOTA HAI

سوۓ بہشت پیمبر کا نور عین گیا

SOYE BAHISTH PAYAMBAR KA NOOR E AIN GAYA

صدقے مزار پاک شہ باوقار کے

SADQAY MAZAR E PAK E SHAH E BAWAQAR KE

طالع ہوا مدینے میں وہ کون ماہ ہے

TALEH HOA MADINEH MAIN WOH KON MAH HAI

عجب غم کی آندھی نے گھیرا ہے مجھ کو

AJAB GHAM KI ANDHI NE GHERA HAI MUJH KO

عروس مہر سے بڑھ کر ہے رتبۂ شبیر

UROOS E MEHR SE BARH KAR HAI RUTBA E SHABBIR

غم پیر فلک کو ہے جواں مر گۓ اکبر

GHAM PEER E FALAK KO HAI JAWAN MAR GAYE AKBAR

مردان خدا واقف اسرار خدا ہیں

MARDAN E KHUDA WAQIF E ISRAR E KHUDA HAIN

مسلم کے پسر ضیغم اندوہ و بلا ہیں

MUSLIM KE PISAR ZEAGHAM E ANDOH O BALA HAIN

مضمون غم سے جان کو کس طرح ہو فراغ

MAZMOON E GHAM SE JAAN KO KIS TARHA HO FARAGH

ہے داغ بدل ماہ فلک کس کی عزا میں

HAI DAAGH E BADAL MAH E FALAK KIS KI AZA MAIN

TOTAL MARSIYAS = 26

 TOTAL MARSIYAS = 23
Total Page Visits: 2124 - Today Page Visits: 3

eMarsiya – Spreading Marsiyas Worldwide