AGHA SIKANDAR MEHDI

آغا سکندر مہدی

آغا سکندر مہدی 1926 میں رائے بریلی ، یو پی ، انڈیا میں پیدا ہوئے ۔ لکھنو یونیورسٹی سے بی اے کی ڈگری لی ۔ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے بی ٹی کی سند لی اور پاکستان آ گئے ۔یہاں آ کر پنجاب یونیورسٹی سے ایم اے کیا ۔ اور محکمہِ تعلیم سے منسلک ہو گئے ۔آغا سکندر مہدی کی شاعری کی آغاز اس وقت ہوا جب وہ نویں جماعت کے طالب علم تھے۔ان کے اس دور کی نظمیں ’’آج کل ‘‘دہلی اور ’’افکار‘‘ بھوپال میں شائع ہوئیں۔

آغا ابھی بارہویں جماعت کے طالب علم تھے کہ ان کے والد سید ظفر مہدی رضوی کا اچانک انتقال ہو گیا تو انہوں نے بڑے بھائی کے کہنے پر شاعری ترک کر دی۔  اور تعلیم کی تکمیل میں منہمک ہو گئے۔تعلیم کی تکمیل کے بعد محکمہ تعلیم میں ملازمت کر لی اور بہاول پور میں سکونت اختیار کی۔دورانِ ملازمت انہوں نے خطابت کا شغل بھی جاری رکھا۔اسی دوران بھائی کے کہنے پر دوبارہ شاعری شر وع کر دی۔۱۹۶۷ء تک آغا غزلیں اور نظمیں کہتے رہے۔۱۹۶۵ء کی پاک بھارت جنگ کے موقع پر انہوں نے جوشیلی قومی نظمیں بھی کہیں۔ان کے اس دور کی شاعری بھی طبعی مناسبت اور گھر کی تربیت کے زیرِ اثر شہدائے کربلا کے ذکر سے کبھی خالی نہیں رہی۔

۔ آغا صاحب نے  1967 سے اپنی وفات 1976  تک سولہ مرثیے تصنیف کیے ۔آغا کے یہ تمام مرثیے مرثیہ معلیٰ جلد اول، دوم اور سوم کے نام سے شائع ہو چکے ہیں۔

Research. Compilation and Post by Irum Naqvi, Rawalpindi, Pakistan

MARASI E AGHA SIKANDAR MEHDI

 

AAJ PHIR KAWISH E AARAISH E FAN KARTA HOON

AAJ PHIR MAIL E PARWAZ HAI PARWAZ E QALAM

AATISH BADOSH NAGHMA E SAZ E SUKHAN HAI AAJ

ALAM KI ABTARI PE QALAM ASHKBAR HAI

AUJ E FALAK PE AAJ QALAM KI NIGAH HAI

BAZM E JAHAN MAIN AAJ AHAB KHALFISHAR HAI

EMAN KI ZIA MATLAE ANWAR E SUKHAN HAI

FARSH E AZA PE MAJMAE AHLE NAZAR HAI AAJ

FIKR KI ARZ O SAMAWAT MAIN JAULANI HAI

HAI GIRAFTAR E ANA ROZ E AZAL SE INSAAN

HAY AAJ PHIR QALAM E NUKTA RAS, WAQAR E SUKHAN

INSAN KO AAJ AMN O SUKOON KI TALASH HAI

ISM E ALLAH SE AGHAZ E BAYAN KARTA HOON

MAJLIS MAIN AAJ ROSHNI E SUBHE YAQEEN HAI

MAJLIS MAIN ZIKR E AZMAT E NAU E BASHAR HAI AAJ

MATLA E FIKR HAI EMAN KI ZIA SE ROSAHN

 

 

TOTAL MARSIYAS = 16

249total visits,1visits today

Spreading Marsiyas Worldwide