MIR AARIF – میر عارف

مراثئ میر عارف

اے زباں خوبئ تقریر دل آویز دکھا

Aye Zuban Khoobi e Taqreer e Dil Awez

آئینہ ہے جوہر مری شمشیر زباں کا

Aina Hai Johar Meri Shamsheer e Zuban Ka

پھر آج باغ سخن میں بہار آتی ہے

Phir Aaj Bagh e Sukhan Main Bahar Aati Hai

پھر مد نظر صیقل شمشیر زباں ہے

Phir Mad e Nazar Saiqal e Shamsheer e Zuban Hai

پھر ہے شمشیر زباں معرکہ آراۓ سخن

Phir Hai Shamsheer e Zaban Maraka Ara e Sukhan

دے ساقئ الست شراب ولا مجھے

Dey Saqi e Alast Sharab e Wela Mujhay

رن میں افلاک امامت کے قمر آتے ہیں

Ran Main Aflak e Imamat Key Qamar Aate Hain

زینت دہ کاشانہ دل حسن وفا ہے

Zeenat Dah e Kashana Dil e Husn e Wafa Hai

گردوں ہے سفینہ مرے دریاۓ سخن کا

Gardoon Hai Safeena Mere Daryae Sukhan Ka

گلچین خیابان سخن ذہن رسا ہے

Gulcheen e Khayaban e Sukhan Zehn Resa Hai

میداں میں آمد آمد اکبر کی دھوم ہے

Maidan Main Aamad Aamad e Akbar Ki Dhoom Hai

ناموس مصطفے سے ہے رخصت حسین کی

Namoos e Mustafa Se Hai Ruksat Hussain Ki

نیرنگ بوستان جہاں ہے بہار ہے

Neerang e Boostan e Jahan Hai Bahar Hai

ہے رایت جنود مضامیں قلم مرا

Hai Rayat e Junood e Mazameen Qalam Mera

ہے شمع شبستان فصاحت سخن اپنا

Hai Shame Shabsitan e Fasahat Sukhan Apna

ہے گلشن شباب سخن پھر بہار پر

Hai Gulshan e Shabab e Sukhan Phir Bahar Par

 

TOTAL MARSIYAS = 16

Total Page Visits: 1814 - Today Page Visits: 2

eMarsiya – Spreading Marsiyas Worldwide