SHADEED LAKHNAWI

8+

 

سیید سجاد حسین شدید                             

سیید سجاد حسین شدید بہترین ادبی ذوق رکھنے والے مرثیہ نگارتھے جن کا تعلق لکھنوء سے تھا۔آپ نے شاعری کی سب سے بہترین اور مقدس صنف مر ثیہ نگاری میں بہت مقبولیت حاصل کی۔

آپ کی حسبی و نسبی وابستگی انیس و عشق و تعشق کےخاندانوں سے ہے۔ایک طرف آپ کا فطری شعری ذوق اور صلاحیت اور دوسری طرف ان دو مکاتیب سخن سے آپ کی خاندانی وابستگی۔ان دونوں کے امتزاج سےآپ کی مرثیہ نگاری میں ایک بہت خوبصورت اور منفرد رنگ پیدا ہو گیا۔

آپ نے ایک مرثیہ کے چند ابتدائ بندوں میں اپنی اس خاندانی وابستگی کا اظہار نہایت خوبصورت انداز میں کیا ہےاور ان دونوں مکاتیب ادب کے خاندانوں سے تعلق رکھنے والےتقریبا”تمام ہی شعراء کا ذکر کیا ہے۔ 

حضرت علی علیہ السلا م پر لکھے گئےاس مر ثیہ کے چند بند ملاحظہ ہوں

:

میں سالک مسالک عشق و انیس ہوں

 میں پیر و تعشق و انس و نفیس ہوں

میں ورثہ دار خاص رشید و رئیس ہوں

میں منزل عروج زبان سلیس ہوں

            روشن میرے کلام سے دونوں کی شان ہے

            میرا ہے یہ بھی وہ بھی میرا خاندان ہے

گر عشق سے ہے مجھ کو تعشق تو ہے بجا

ہے انس انیس سے تو ہے رشتے کا مقتضے

مجھ سے  زیادہ کون  ہے عارف نفیس کا

کیونکر نہ ہو ادیب  ادب پر جو  ہو فدا

           مدحت سرائے آل بہ طرز جدید ہوں

           نخل وحید  باغ جناب رشید ہوں

 رثائ ادب سے دلچسپی رکھنے والے آپ کا کلام بہت ذوق و شوق سے سنتے اور پڑھتے ہیں اور آپ کو ایک مخصوص مقبولیت عزت اور تکریم حاصل ہے-شدید صاحب کے جانشین جناب گوھر لکھنوی اپنی وراثت کا حق بخوبی ادا کر رہے ہیں اورآج لکھنؤ کے بہترین تحت اللفظ مرثیہ خواں اور مرثیہ نگار ہیں

MARASI E JANAB E SHADEED

 

AAJ HAI MAD E NAZAR MADHO SANA E ZAHRA

AAMAD E KHUSRAWE KHAWAR KA JO SAMAN HOA

ASHIQ NAHIN WOH JIS MAIN KE KHOE WAFA NA HO

AWWAL HI SE MAIN HAQ O SADAQAT KE SATH HOON

DO AKHTAR E TABINDA HAIN IK BURJ E SHARAF MAIN

DO HAZRAT E ZAINAB KE PISAR RAN KO CHALAY HAIN

EHD E SHABAB UMR KI FASL E BAHAR HAI

GHURBAT MAIN SUAB O SAKHT HAI FURQAT HABIB KI

HAN AYE QALAM RAWAN SEFAT E ZULFAQAR HO

HUSN E KALAM HAI HASAN E MUJTABA KA ZIKR

IK SANNATA SA GOYA BAZM E IMKANI MAIN THA

INSAN BHI ZANJEER E MUHABBAT KI KARI HAI 

JAHAN E SABR KI IK TAJDAR THII ZAINAB

KASHTI E UMR POHONCHI HAI BEHR E SHABAB MAIN

MADH E ABBAS KE LASHKAR KA ALAM BARHTA HAI

MAIN BULBUL E REYAZ E JANAB E RASHEED HOON

MAIN SALIK E MASALIK E ISHQ O ANEES HOON

MALIK E MASNAD E SULTAN E SUKHAN HOON MAIN SHADEED

MALIK E MUMLIKAT E SABR O RAZA HAI SHABBIR

MANZIL E ISHQ E KHUDA SAKHT HAI AASAN NAHIN

MEHBOOB E KIRDAGAR KA PYARA HUSSAIN HAI

NAKHL E UMEED E MUHAMMAD MAIN SAMAR AAYA HAI

PAYE JEHAD SHAH E MASHRAQAIN JAATE HAIN

PHIR BARHATA HOON QADAM JANIB E MAIDAN E SUKHAN

PHIR MERI TABE RASA MAIL E PARWAZ HAI AAJ

RAN MAIN HAMSHAKL E RASOOL US SAQALAIN AATA HAI

SHAH E DEEN AAJ MADINE SE SAFAR KARTE HAIN

SHAH KO MANZIL E AKHIR JO SAFAR MAIN AAYI

UROOJ E BEHR E NABI ZOLJALAL DE MUJH KO

YA HUSSAIN IBN E ALI AB MUJH KO REFAT DIJIYE

YARAB MERI TAQREER MAIN TASEER ATA KAR

 

TOTAL MARSIYAS = 32

 

 

674total visits,2visits today

eMarsiya – Spreading Marsiyas Worldwide