NASIR LAKHNAWI – ناصر

مراثئ ناصر

 

اک نورِ کبریا ہے پیمبر کی روشنی

IK NOOR E KIBRIYA HAI PAYAMBAR KI ROSHNI

اے خدا اشکوں میں دریا کی روانی آ جاۓ

AYE KHUDA ASHKON MAIN DARYA KI RAWANI AA JAYE

جب سے وجود سے ہوں تمنا سفر میں ہے

JAB SE WAJOOD SE HON TAMANNA SAFAR MAIN HAI

راز اس کائنات کو سمجھو

RAAZ IS KAINAT KO SAMJHO

سجدہ کرو ادب سے خداۓ قدیر کا

SAJDA KARO ADAB SE KHUDA E QADEER KA

سکونِ قلب رسالت ہے مجلس و ماتم

SUKOON E QALB HAI MAJLIS O MATAM

صد شکر جو کچھ بھی ہے خالق کی عطا سے

SAD SHUKR JO KUCH BHI HAI KHALIQ KI ATAA SE

کیا بات ہے جہاں میں خدا کے سفیر ہیں

KYA BAAT HAI JAHAN MAIN KHUDA KE SAFEER HAIN

لب پر چھڑی ہے قاسمِ گل پیرہن کی بات

LAB PE CHARI HAI QASIM E GUL PAIRAHAN KI BAAT

ہر طرفہ انقلاب پہ چھاتے رہے حسین

HAR TURFA INQUILAB PE CHATAY RAHAY HUSSAIN

ہے اسمِ خالق یکتا سے ابتداۓ سخن

HAI ISM E KHALIQ YAKTA SE IBTEDAYE SUKHAN

یہ صفِ مرثیہ اللہ کی کرامت ہے

YEH SAF E MARSIYA ALLAH KI KARAMAT HAI

TOTAL MARSIYA = 12

Total Page Visits: 97 - Today Page Visits: 1

eMarsiya – Spreading Marsiyas Worldwide