MIRZA MUHAMMAD RAFI SAUDA – سودا

★ مرزا محمد رفیع سودا  ★
مرزا رفیع سودا کا شمار ان خوش قسمت شعراء میں ہوتا ہے جنہیں میر تقی میر شاعر بلکہ “مکمل شاعر” سمجھتے تھے ۔ چھوٹی عمر میں شاعری کا شوق پیدا ہوا۔ اور فارسی میں شعر کہنے لگے۔ نواب آصف الدولہ سے ملک الشعراء کا خطاب ملا۔ مولانا ضمیر اختر نقوی کے پاس ان کے دو قلمی مرثیے موجود ہیں
حسین  تجھ کو یہ عرشِ بریں کرے ہے سلام
وہاں سے آن کے روح الامیں کرے ہے سلام
فقط نہ گردوں ہی تسلیم میں ہے تیرے خم
تجھے تو عیسیِٰ گردوں نشیں کرے ہے سلام
وحوش خاک پہ جتنے ہیں اور ہوا میں طیور
جہاں ہے جو کوئی تجھ کو وہیں کرے ہے سلام
فلک پہ جو ہے سو کرتا ہے بندگی تیری
ہر ایک ساکنِ روئے زمیں کرے ہے سلام
جو اہلِ شرع کا ہے رکن وہ سدا تجھ کو
سمجھ کے صاحبِ شرعِ متیں کرے ہے سلام
ترا وہ نور ہے جس کے تئیں چہ مہر و چہ ماہ
ہر ایک خاک پہ گھس کر جبیں کرے ہے سلام
تری وہ ذاتِ مکرم ہے اے شہِ دو جہاں
کہ جس کو خلقتِ دنیا و دیں کرے ہے سلام
تری جناب تو وہ خلق کی ہے خالق نے
جسے ہمیشہ تمام آفریں کرے ہے سلام
عبودیت ہے تری فخر ایک عالم کو
ترے غلام کو فغفورِ چیں کرے ہے سلام
یہ نقش صفحۂ عالم پہ ہے ترا جس کو
ہر ایک صاحبِ تاج و نگیں کرے ہے سلام
نہ موجِ آب ہی پیاسی ہے بندگی کی تری
حباب بھی بدمِ واپسیں کرے ہے سلام
کسی خوشی میں ہو کوئی سنے جو تیرا نام
تو جان و دل سے وہ ہو کر حزیں کرے ہے سلام
تری جناب میں ہووے قبول یا شہِ دیں
ادب سے سودا  بصدق و یقیں کرے ہے سلام
Special Thanks to Zeeshan Zaidi, UK for short biography

مراثئ سودا

ابر رونیکو

ABR DEKHO

آج روتے ہیں

AAJ ROTAY HAIN AHMAD E MUKHTAR

آج وہ دن ہے کہ سب اہل جہاں روتے ہیں

AJ WOH DIN HAI KE SAB AHLE JAHAN ROTE HAIN

احوال روزکار مورخ لکھا گیا

AHWAL E ROZGAR E MUARRIKH LIKHA GAYA

اشجار غم سے

ASHJAR GHAM SE

اے امام زبان واویلا

AYE IMAM E ZAMAN WAWAILA

اے باد صبا

AYE BAD E SABA

اے قوم ٹک سنو

AYE QOM TUK SUNO

بانو کہتی تھیں کہ رن کا قصد مت کر سائیان

BANO KEHTI THIIN KE RAN KA QASD MAT KAR SAIYAN

بانو یوں کہتی ہیں

BANO YEHI KEHTI HAIN

بدن پہ زخم ستم رن میں جب اٹھاۓ حسین

BADAN MAIN ZAKHM E SITAM RAN MAIN JAB UTHAYE HUSSAIN

بنت نبی کے

BINTE NABI KE

بنت نبی

BINTE NABI

بنے قاسم کو

BANE QASIM KO

بولے ہیں مرغ چمن

BOLE HAIN MURGHE CHAMAN

پہونچ اے ابر

POHONCH AYE ABR

پوچھے ہے تم سے

POOCHEY HAIN TUM SE

تشنہ لب سبط

TASHNA LAB SIBTE PAYAMBAR

جاؤ بھرے

JAO BHARAY

جب کہا ہو کر

JAB KAHA HO KAR

جس کو دیکھا زیر فلک سو غم سے آج مکدر ہے

JIS KO DEKHA ZER E FALAK SO GHAM SE AAJ

جو مجھ سے کہتے ہیں

JO MUJH SE KEHTAY HAIN KE MARSIYE SIWA KUCH AUR

 جیسے میں دیکھا ہے

JAISE MAIN DEKHA HAI

چاند رات محرم

CHAND RAAT MOHARRAM

چرخ کی

CHARKH KI

چلا جب کربلا

CHALA JAB KARBALA

چمن میں آئ ہے کیسی یہ رت مری نین سے کوئ نہارے

CHAMAN MAIN AAYI HAI KAISI

خامہ ام

KHAMA AM

دل خیر النسا جسدم

DIL KHAIR UN NISA JIS DAM

دل سے جو پوچھا میں

DIL SE JO POOCHA MAIN

دیکھکر صبح کو میں

DEKHKAR SUBHA KO MAIN

دیکھو چرخ

DEKHO CHARKH

رکھتی ہے داغ غم

RAKHTI HAI DAGHE GHAM

رووے جو

ROUWAY JO

سمیت از اقربا بن

SAMAIT AZ AQRABA BIN

سن اے گردوں

SUN AYE GARDOON

سن لو محبان

SUN LO MUHIBBAN

سنو محبو

SUNO MUHIBBO

شام سے وہ قافلہ

SHAM SE WOH QAFILA

عابد کہتے ہیں یہ سب سے

ABID KEHTE HAIN YEH SAB SE

عابدین کہتے ہیں

ABIDYAN KEHTE HAIN

عزیزو

AZEEZO

غرق خوں میں

GHARQ E KHOON MAIN

غم ہے

GHAM HAI

فلک نے کربلا میں ابر جس دن ظلم کا چھایا

FALAK NE KARBALA MAIN ABR

کا میں کہے بات کمن من کے

KA MAIN KAHAY

کافراں آل محمد پہ ستم

KAAFIRAN

کربل میں جو

KARBAL MAIN JO

کربلا سے شام ہو کر جب مدینے آئیاں

KARBALA SE SHAAM HO KAR JAB MADINE AAIYAN

کرتی ہیں بانو

KEHTI HAIN BANO

کرے ہے خامہ ء غم

KARE HAI KHAMA E GHAM

کس دن اس شادی

KIS DIN IS SHADI

کس سے اے چرخ

KIS SE AYE CHARKH

کشتہ گرویرزجور

KUSHTA E

کہا اساڑھ نے یوں جیٹھ کے مہینے سے

KAHA ASARH NE YUN JAITH KE MAHINAY SE

کہا سرور نے

KAHA SARWAR NE

کہا یہ دل کو راضی ہے کیوں تو چشم پرنم سے

KAHA YEH DIL KO MAIN

کہتا ہے غم ہمیں نہ

KEHTA HAI GHAM HAMAIN NA

کہتی ہیں بانو

KEHTI HAIN BANO

کہتی ہیں بنت پیمبر

KEHTI HAIN BINTE PAYAMBARKEHTI HAIN BINTE PAYAMBAR

کہتے ہیں رورو کے

KEHTE HAIN RO RO KE

کہوں کس سے

KAHOON KIS SE

کہے ہے فاطمہ رو رو

KAHAY HAI FATIMA RO RO

کہیں فاطمہ

KAHAIN FATIMA

کوکدی زینب

KOKDI ZAINAB

کیا چرخ واژگوں کا ستم اب کروں بیاں

KYA CHARKH WAZGUN KA SITAM

کیا کروں شادی

KYA KAROON SHADI

کیا میں صبح

KYA MAIN SUBHA

کیا نظر بھر بھر کے

KYA NAZAR BHAR BHAR

کیا ہوا ہاۓ خدا آج حسین مظلوم

KYA HOA HAI KHUDA AAJ

کیا ہوا ہاۓ

KYA HOA HAI

کیوں مضطرب الحال

KYON MUZTARIB AL HAAL

گردوں پراز

GARDOON PARAZ KHAROZ O FUGHAN WA MUSIBATA

گردوں پہ

GARDON PAY

گیا گودی میں

GAYA GODI MAIN

گردوں پہ

GARDON PAY

گیا گودی میں

GAYA GODI MAIN

لگا وطن سے جو

LAGA WATAN SE JO

ماں اصغر کی دن اور رین

MAAN ASGHAR KE

مان اصغر کے دن

MAAN ASGHAR KI DIN AUR RAIN

مقبول حق ہے جس کو

MAQBOOL E HAQ HAI JIS KO

میں اک نصاری سے یوں ازراہ نادانی

MAIN IK NASARA SE AZRAHA E NADANI

میں تم سے کیا کہوں

MAIN TUM SE KYA KAHOON

نہیں ہلال فلک پر مہ محرم کا

NAHIN HILAL E FALAK PAR MAH E MUHARRAM KA

نئ یہ شادی بیاہ کی کس کی تو نے فلک اٹھائ ہے

NAYI YEH SHADI

ہاۓ وہ ناتی

HAI WOH NATI TUMHARE YA NABI

ہاۓ وہ

HAYE WOH

ہاۓ وے حیدر

HAYE WOH HAIDER

ہے ایک روایت

HAI AIK REWAYAT

وہ مجھ سے کہتے ہیں کہ مرثیۓ سوا کچھ اور

WOH MUJH SE KEHTE HAIN

یارو ایسا

YARO AISA

یارو ستم نو

YARO SUNO TO

یارو ستم یہ سنو چرخ کہن کا

YARO SITAM YEH SUNO

یارو سنو تو

YARO SUNO TO

یارو نہ اپنے

YARO NA APNE

یہ زینب

YEH ZAINAB

TOTAL MARSIYAS =96

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

8+
Total Page Visits: 2377 - Today Page Visits: 5

eMarsiya – Spreading Marsiyas Worldwide