MIRZA MUHAMMAD RAFI SAUDA

2+

★ مرزا محمد رفیع سودا  ★
مرزا رفیع سودا کا شمار ان خوش قسمت شعراء میں ہوتا ہے جنہیں میر تقی میر شاعر بلکہ “مکمل شاعر” سمجھتے تھے ۔ چھوٹی عمر میں شاعری کا شوق پیدا ہوا۔ اور فارسی میں شعر کہنے لگے۔ نواب آصف الدولہ سے ملک الشعراء کا خطاب ملا۔ مولانا ضمیر اختر نقوی کے پاس ان کے دو قلمی مرثیے موجود ہیں
حسین  تجھ کو یہ عرشِ بریں کرے ہے سلام
وہاں سے آن کے روح الامیں کرے ہے سلام
فقط نہ گردوں ہی تسلیم میں ہے تیرے خم
تجھے تو عیسیِٰ گردوں نشیں کرے ہے سلام
وحوش خاک پہ جتنے ہیں اور ہوا میں طیور
جہاں ہے جو کوئی تجھ کو وہیں کرے ہے سلام
فلک پہ جو ہے سو کرتا ہے بندگی تیری
ہر ایک ساکنِ روئے زمیں کرے ہے سلام
جو اہلِ شرع کا ہے رکن وہ سدا تجھ کو
سمجھ کے صاحبِ شرعِ متیں کرے ہے سلام
ترا وہ نور ہے جس کے تئیں چہ مہر و چہ ماہ
ہر ایک خاک پہ گھس کر جبیں کرے ہے سلام
تری وہ ذاتِ مکرم ہے اے شہِ دو جہاں
کہ جس کو خلقتِ دنیا و دیں کرے ہے سلام
تری جناب تو وہ خلق کی ہے خالق نے
جسے ہمیشہ تمام آفریں کرے ہے سلام
عبودیت ہے تری فخر ایک عالم کو
ترے غلام کو فغفورِ چیں کرے ہے سلام
یہ نقش صفحۂ عالم پہ ہے ترا جس کو
ہر ایک صاحبِ تاج و نگیں کرے ہے سلام
نہ موجِ آب ہی پیاسی ہے بندگی کی تری
حباب بھی بدمِ واپسیں کرے ہے سلام
کسی خوشی میں ہو کوئی سنے جو تیرا نام
تو جان و دل سے وہ ہو کر حزیں کرے ہے سلام
تری جناب میں ہووے قبول یا شہِ دیں
ادب سے سودا  بصدق و یقیں کرے ہے سلام
Special Thanks to Zeeshan Zaidi, UK for short biography

MARASI E MIRZA SAUDA

 

AAJ ROTAY HAIN AHMAD E MUKHTAR

AAJ WOH DIN HAI KE SAB AHL E JAHAN ROTAY HAIN

AHWAL E ROZGAR E MUARRIKH LIKHA GAYA

BADAN MAIN ZAKHM E SITAM RAN MAIN JAB UTHAYE HUSSAIN

GARDOON PARAZ KHAROZ O FUGHAN WA MUSIBATA

HAI WOH NATI TUMHARE YA NABI

JO MUJH SE KEHTAY HAIN KE MARSIYE SIWA KUCH AUR

KAHA ASARH NE YUN JAITH KE MAHINAY SE

KAHA YEH DIL KO MAIN

KARBALA SE SHAAM HO KAR JAB MADINE AAIYAN

MAAN ASGHAR KI DIN AUR RAIN

MAIN IK NASARA SE AZRAHA E NADANI

MAIN TUM SE KYA KAHOON YARO YEH KYA SAHR HAI AAJ

NAHIN HILAL FALAK PAR MAH E MUHARRAM KA

YARO SITAM E NAU YEH SUNO CHARKH E KUHAN KA

TOTAL MARSIYAS = 15

1028total visits,3visits today

eMarsiya – Spreading Marsiyas Worldwide