MIR WAHEED – میر وحید

 

★ میر وحید فرزند ِ میر ُانسؔ ★

کہتے ہیں کہ میر ُانس کے بیٹے اور انیس کے بھتیجے میر وحید اگر کچھ عرصے اور زندہ رہ جاتے تو دوسرے انیس ہوتے ۔ 47 سال کی عمر میں انتقال کر گۓ ۔ یہ وہ واحد شاعر ہیں جنہوں نے مارد ابن ِ صدیف کی لڑائ لکھی ۔ اس مرثیے کا مطلع ہے جو حضرت عباس کے حال میں ہے

اے قلم دامن ِ کاغذ پہ گوہر ریز ہو پھر
اے سخن منتظم ِ نظم ِ دل آویز ہو پھر
اے ِخرد غیرت ِ شبدیز ِ سبک خیز ہو پھر
اے زباں صورت ِ شمشیر ِ علی تیز ہو پھر
ڈھنگ ضرب ِ اسد ِ حق کا نظر آجاۓ
معرکہ خیبر و خندق کا نظر آجاۓ

اسی مرثیے میں حضرت عباس کا ایک رجز یوں رقم ہے جو وہ گستاخ مارد کے جواب میں پڑھتے ہیں

تن کے فرمایا او کور بڑے بول نہ بول
طعنہ زن ہوں گے کھڑے ہیں جو یہاں غول کے غول
قرت العین ِ علی میں ہوں ذرا آنکھیں کھول
گر ہے محتاج ِ عصا راہ کو نیزے سے ٹٹول
پاؤں اس پر بھی نہ اٹھیں تو نہ گھبرا ظالم
ہاتھ پکڑے ہوۓ ہے موت چلا آ ظالم

Special Thanks to Zeeshan Zaidi, UK for short biography

مراثئ میر وحید

آیا ہے آفتاب امامت جلال میں

AAYA HAI AAFTAB E IMAMAT JALAL MAIN

آتا ہے ضیغم اسد حق ترائ میں

AATA HAI ZEAGHAM E ASAD E HAQ TARAI MAIN

اے آفتاب اوج مضامیں بلند ہو

AYE AAFTAB E AUJ E MUZAMEEN BALAND HO

اے بہر طبع جوش تکلم دکھا مجھے

AYE BEHR E TABA JOSH E TAKALLUM DIKHA MUJHAY

اے سیف سر شگاف قلم تیزیاں دکھا

AYE BEHR E TABA JOSH E TAKALLUM DIKHA MUJHAY

اے قلم دامن کاغذ پہ گہر ریز ہو پھر

AYE QALAM DAMAN E KAGHAZ PA GOHAR ZER HO PHIR

اے نظم جہاں مرقع ء دشت جدل دکھا

AYE NAZM E JAHAN MURAQQA E DASHT E JADAL DIKHA

پاۓ کیا حضرت زینب نے بھی نایاب پسر

PAYE KYA HAZRAT E ZAINAB NE BHI NAYAB PISAR

جام جہاں نما سخن آبدار ہے

JAAM E JAHAN NUMA SUKHUN E AABDAR HAI

جب لشکر امام امم کوچ کر چکا

JAB LASHKAR E IMAM E UMAM KOOCH KAR CHUKA

حیدر کا شیر عازم دشت قتال ہے

HAIDER KA SHER AAZIM E DASHT E QATAAL HAI

دستار سر عرش معلی ہیں محمد

DASTAR E SAR E ARSH E MOALLA HAIN MOHAMMAD

دل آئینہ حسن حسینان سخن ہے

DIL AINAN E HUSN E HUSSAINAN E SUKHUN HAI

زیب سریر عرش معظم ہیں مصطفی

ZEB E SAREER E ARSH E MOAZZAM HAIN MUSTAFA

شرح منشور خداوند ہے فرماں کس کا

SHARH E MANSHOOR E KHUDAWAND HAI FARMAN KIS KA

کعبے میں جب ولادت مشکل کشا ہوئ

KAABE MAIN JAB WILADAT E MUSHKIL KUSHA HOI

لکھا ہوا نہیں مثتا کسی کی قسمت کا

LIKKHA HOA NAHIN MITTA KISI KI QISMAT KA

مشہور شش جہت ہیں شرف کس جناب کے

MASHOOR SHASHJAHAT HAIN SHARAF JIS JANAB KE

نو بادہ ء ریاض حسینی خزاں پہ ہے

NAU BADA E REYAZ E HUSSAINI KHIZAN PA HAI

نیرنگیء جہاں کا سدا ایک حال ہے

NEERANGI E JAHAN KA SADA AIK HAAL HAI

ہاں اے زباں دہن کی گہر ریزیاں دکھا

HAAN AYE ZABAN DEHN KI

ہاں اے قلم بہار دکھا کارزار کی

HAAN AYE QALAM BAHAR DIKHA KARZAR KI

ہوۓ اسیر نبی کے حرم جو زنداں میں

HOYE ASEER NABI KE HARAM JO ZINDAAN MAIN

ہے ناظم قلم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

HAI NAZIM E QALAM RO MAZMOON QALAM MERA

یارب سخن وری کا مرے سر کو تاج دے

YARAB SUKHANWARI KA MERE SAR KO TAAJ DE

یارب مجھے گلچین گلستان سخن کر

YARAB MUJHAY GULCHEEN E GULISTAN E SUKHUN KAR

یارب مرے قلم کو جواہر نگار کر

YARAB MERE QALAM KO JAWAHIR NIGAR KAR

TOTAL MARASI = 27

 

 

 

Total Page Visits: 2396 - Today Page Visits: 1

eMarsiya – Spreading Marsiyas Worldwide