SYED MEERZA TASHUQ

0

تعشق کا اصل نام سیّد میرزا تھا ۔ میر عشق کے بھائ تھے اور سواۓ ان کے اور اپنے والد کے کسی کے شاگرد نہ ہوۓ ۔ انیس ان کی بڑی عزت کرتے تھے ۔ میر عشق کے انتقال کے بعد ان کے تمام شاگردوں نے تعشق کو اپنا استاد مانا ۔ کل 27 رباعیاں ، 14 قصیدے، 34 مرثیے اور 62 سلام کہے ۔ غزلوں کا ذخیرہ عراق جاتے ہوۓ سمندر کی نذر کر دیا اور یہ چاہا کہ ان کا نام مدح ِ حسین کی حیثیت سے باقی رہے

 

MARASI E SYED MEERZA TAASHUQ

 

AAMAD MAH E BATOOL KI HAI FAUJ E SHAM MAIN

DIL MERA ULFAT E SHABBIR SE BHAR DE YARAB

DO DIL JO AIK HON TO KYON NA KAAM NAIK HO

HAZRAT KO DOPEHAR JO HOI RAZMGAH MAIN

HUSSAIN KHAIMAY SE ASGHAR KO LE KE JAATAY HAIN

IS BAAGH MAIN HO TALKH NA AARAM KISI KA

KUCH QADAR DAGH E HIJAR TUJHAY AYE FALAK NAHIN

PARWANA E JANBAAZ SOYE SHAMA RAWAAN HAI

SACH HAI DUNYA MAIN SHAB E HIJR BALA HOTI HAI

SHABBIR KE SAFAR KA ZAMANA KHAREEB HAI

Special Thanks to Zeeshan Zaidi and Ali Imam Gauhar for their assistance

 

TOTAL MARSIYAS = 10

754total visits,1visits today

eMarsiya – Spreading Marsiyas Worldwide