MIR ZAMEER

٭ میر مظفّر حسین ضمیرؔ ٭

میر ضمیر ، مرزا دبیر کے استاد تھے ۔ استاد ِ روشن نے شاگرد ِ بلند تقدیر کو تخلص بھی بنا دیا اور خود اس بات کا فخر یوں کرتے ہیں

پہلے تو یہ شہرہ تھا ضمیرؔ آیا ہے
اب کہتے ہیں استاد ِ دبیرؔ آیا ہے
کردی مری پیری نے مگر قدر سوا
اب قول یہی ہے سب کا پیر آیا ہے

مظفر حسین ضمیر نے مرثیہ نگاری میں نئی جان ڈال دی اور اس سلسلے میں ایک ایسا انداز اختیار کیا جو آگے چل کر بہت مقبول ہوا اور لوگ ان کی تقلید کرنے لگے ، ضمیر کے عہد تک مرثیہ کے ضروری اجزاءکے طور پر چہرہ ، گریز ، رخصت ، آمد ، سراپا ، شہادت اور بین مرثیہ میں داخل ہو چکے تھے. میر ضمیر ہی نے مرزا سلامت علی کو “دبیر” کا تخلص تجویز کیا۔ میر ضمیر کا پلڑا اس زمانے کے تین نامور مرثیہ گو میر خلیق ، دلگیر اور مرزا فصیح سے کسی طرح کم نہ تھا ۔

Special Thanks to Zeeshan Zaidi, UK for this short biography

MARASI E MIR ZAMEER

AAB E DAM E SHAMSHEER SE JAB PYAS BUJHA KAR

AYE MOMINO ZEEST KA ALAM HAI GHANEMAT

AZEEZO AAJ SHAHADAT KI RAAT AAYI HAI

AZEEZO AAJ YEH NEERANG HAI ZAMANE MAIN

CHON AFTAB E SUBHE SHAHADAT BALAND SHUD

DEKHLAE KHUDA DAAGH NA FARZAND E JAWAN KA

GHORAY SE JO NAUSHAH GIRA ROYE ZAMEEN PAR

JAB BADSHAH E YASRAB O BATHA HOA SHAHEED

JAB FAUJ E HUSSAINI GAYI GULZAR E IRAM KO

JAB KIYA KOFION NE SHEH KO TALAB KOFAY MAIN

JAB PYAS AAB E TEER SE AKBAR BUJHA CHUKAY

JAB SHAH SE MAIDAN KI REZA PA CHUKAY AKBAR

JAB ZALIMON NE KHATIMA E PANJATAN KIYA

JIS DAM DAHUM E MAH E MUHARRAM KI SHAB AAYI

JIS DAM HOYE ABBAS KHAREDAR E SHAHADAT

KHILAT JO SITARON KA HOA PERAHAN E SHAB

KHUDA NE SHAH PE YEH LUTF BEHISAB KIYA

KYA SHOR AAMAD AAMAD E ABBAS RAN MAIN HAI

LASHAIN ZAINAB KE JIGAR GOSHON KI LATE HAIN HUSSAIN

MAIDAN MAIN DOAHAR JO DAM E JANG TAL GAYI

MAIN NE DEKHI JO AHADEES E BAHAR E ANWAAR

NAIZA JO KHA KE SEENE MAIN AKBAR HOYE TAMAM

NIKLA JO SAR E MEHR GAREBAN SEHAR SE

RAN SE AB KHAIMAY KO ZAINAB KE PISAR AATE HAIN

TA ZEEST FATIMA PA JO RANJ O ALAM RAHA

YARAB SAGHEER SIN MAIN KOI BEPADAR NA HO

YAROON JAHAN MAIN ISHQ KA ANJAM MARG HAI

TOTAL MARSIYAS = 27

 

356total visits,2visits today

Spreading Marsiyas Worldwide